بڑی ٹیموں کا چھوٹی ٹیموں سے کھیلنا ضروری ہے: مصباح

23 June 2016

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان مصباح الحق کا کہنا ہے کہ ٹیسٹ کرکٹ کھیلنے والی چھوٹی ٹیموں کو بڑی ٹیموں سے کھیلنے کے یکساں مواقع ملنے چاہئیں ورنہ وہ اپنے کھیل میں بہتری نہیں لاسکیں گی۔

واضح رہے کہ آئی سی سی 2019 سے تمام ٹیموں کو دو درجوں میں ان کی رینکنگ کی بنیاد پر تقسیم کرکے ٹو ڈویژن ٹیسٹ کرکٹ شروع کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

مصباح الحق نے بی بی سی اردو سروس کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ ٹیسٹ کرکٹ میں مسابقت پیدا کرنے اور اس کا معیار بلند رکھنے کےلیے ضروری ہے کہ تمام ٹیمیں ایک دوسرے کےخلاف کھیلیں۔

انھوں نےکہا کہ اگر کوئی ٹیم عالمی رینکنگ میں نویں نمبر پر ہے اور وہ عالمی نمبر ایک یا نمبر دو ٹیم سے نہیں کھیلتی تو اس کے کھیل میں بہتری پیدا ہونا مشکل ہوگی۔ نچلی رینکنگ کی ٹیم کے کھیل میں اسی وقت بہتری آئے گی جب اسے اچھی ٹیموں سے کھیلنے کے مواقع میسر آئیں گے۔

مصباح الحق نے کہا کہ تمام ٹیموں کو ایک دوسرے کےخلاف کھیلنے کے برابر مواقع دیے جانے چاہئیں لیکن اگر ایسا نہیں ہوتا اور بڑی ٹیمیں ہی آپس میں کھیلتی رہیں گی تو پھر دوسری ٹیموں کے لیے اپنے کھیل میں بہتری لانے کے مواقع بہت کم رہ جائیں گے۔

مصباح الحق کا کہنا ہے کہ ایک ہی جیسی دو ٹیموں کے آپس میں بار بار کھیلنے سے شائقین کی دلچسپی بھی ختم ہوجاتی ہے کیونکہ وہ تمام ٹیموں کو ایک دوسرے کے خلاف کھیلتا دیکھنا چاہتے ہیں۔’وہ دو یا تین ٹیموں کو ہی بار بار آپس میں کھیلتا دیکھنا نہیں چاہتے۔‘

مصباح الحق نے چار روزہ ٹیسٹ میچ کی تجویز کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ٹیسٹ کرکٹ کی اپنی روایتی خوبصورتی ہے اس سے چھیڑ چھاڑ کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔

انھوں نےکہا کہ ٹیسٹ میچ چار دن کا کر دینے سے ڈرا کے امکانات بڑھ جائیں گے اور شائقین کی رہی سہی دلچسپی بھی ختم ہوجائے گی۔

یاد رہے کہ انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ کے چیئرمین کالن گریوز نے ٹیسٹ میچ چار دن کا کرنے کی تجویز پیش کی ہے اور وہ دوسرے کرکٹ بورڈز سے بھی اس کی حمایت کے لیے کوشاں ہیں۔

Source. BBC Urdu News

Leave a Reply

Be the First to Comment!


wpDiscuz