روزے کے دوران پیاس کی شدت بڑھانے والی 8 عادات

09 June 2016

ماہ رمضان کا آغاز ہوچکا ہے اور گرمی کی شدت میں اضافے کے باعث روزانہ ڈھائی سے ساڑھے تین لیٹر پانی پینے کے باوجود جسم ڈی ہائیڈریشن کا شکار ہوسکتا ہے۔

مگر کیا آپ کو معلوم ہے کہ اتنا پانی پینے کے باوجود جسم میں اس کی کمی کیا وجوہات ہیں ؟

درحقیقت یہ آپ کی ہی چند عام عادات ہیں جو روزے کے دوران جسم کو پانی کی کمی کا شکار بناسکتی ہیں۔

موسم کو نظرانداز کرنا

آپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ موسم آپ کے جسم پر بہت زیادہ اثر انداز ہوتا ہے، موسم میں آنے والی تبدیلی جسم میں پانی کی سطح پر اثرانداز ہوتی ہے۔ اگر ارگرد کا ماحول بہت زیادہ خشک ہو تو یہ آپ کے پسینے پر اثر انداز ہوتا ہے اور دن بھر کے لیے جسم کو درکار پانی کی ضروریات پر اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ سیدھی سی بات ہے جتنا زیادہ پسینہ آئے گا اتنا ہی جسم میں پانی کم ہوگا جبکہ ہوا کے معیار میں تبدیلی نظام تنفس پر اثرانداز ہوتی ہے اور سانس کے ذریعے زیادہ پانی باہر خارج ہوکر ڈی ہائیڈریشن کا باعث بنتی ہے۔ اس سے بچنے کے لیے دن کا آغاز یا وقت سحر پر 8 اونس گلاس پانی ضرور پینا عادت بنائیں۔

جلد کا خیال نہ رکھنا

ہماری جلد میں جسم کا ایک عضو ہوتی ہے اور سورج کی تمازت اس پر اثرانداز ہوکر جسم میں پانی کی سطح کو کم کرتی ہے۔ عمر میں اضافہ بھی جلد کے لیے نمی کو متوازن رکھنے کے حوالے سے مشکلات کا شکار کردیتا ہے تو رمضان کے دوران سورج سے بچنا بہت ضروری ہوتا ہے۔

متوازن غذا سے دوری

اجناس، پروٹین، پھلوں اور سبزیوں سے بھرپور غذا ایک صحت مند جسم کی کنجی ثابت ہوتی ہے، مگر یہ خاموشی سے دن بھر میں جسم میں پانی کی سطح پر اثرانداز بھی ہوتی ہے۔ پھل اور سبزیاں پانی سے بھرپور ہوتے ہیں خاص طور پر کھیرے ، تربوز اور خربوزے وغیرہ، ان کو رمضان میں اپنی غذا کا حصہ بناکر جسم میں پانی کی سطح کو بڑھانے میں مدد حاصل کی جاسکتی ہے۔ غذا میں کاربوہائیڈریٹ کو باہر کرنے سے بھی جسم خاموشی سے ڈی ہائیڈریشن کا شکار ہونے لگتا ہے۔ دلیہ، اجناس پر مبنی پاستا اور براﺅن چاول کا استعمال اس حوالے سے مددگار ثابت ہوتا ہے۔

بہت زیادہ سفر کرنا

اب یہ کام کے لیے ہو یا تفریح کے لیے، سفر کرنے کی عادت ڈی ہائیڈریشن کے خطرے کا باعث بن سکتی ہے، جب آپ معمول کے مطابق باہر گھومتے پھرتے ہیں تو آپ کی غذائی عادات سب سے پہلے متاثر ہوتی ہیں اور اکثر صحت کے لیے نقصان دہ اشیاءکو استعمال کیا جاتا ہے، اسی طرح پانی کا استعمال کم ہوجاتا ہے جوکہ رمضان میں ویسے ہی کافی کم ہوچکا ہوتا ہے۔

ادویات کے لیبل کو نہ پڑھنا

متعدد ادویات پیشاب آور ہوتی ہیں اور آپ کے باتھ روم کے چکر زیادہ لگتے ہیں جس سے ڈی ہائیڈریشن کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ تو آپ کو جاننا چاہئے کہ آپ کونسی ادویات استعمال کررہے ہیں اور ہر بوتل پر موجود لیبل کے ذریعے ان کے سائیڈ ایفیکٹس سے آگاہی حاصل کریں۔

ہر وقت تناﺅ کے شکار

تناﺅ گردوں کے غدود پر اثرانداز ہوتا ہے اور اس کے نتیجے میں تناﺅ کا باعث بننے والے ایک ہارمونایلڈوسٹیرون کی زیادہ مقدار خارج ہوتی ہے جو جسم میں پانی اور منرلز کی سطح کو ریگولیٹ کرتا ہے۔ اس ہارمون کی زیادہ خارج ہونے کا مطلب ہے کہ گردوں میں نمکیات کی سطح بڑھ رہی ہے جو جسم سے پیشاب کے راستے خارج ہوتی ہے اور پانی کی سطح گرنے لگتی ہے۔

جنک فوڈ کا استعمال

اگر آپ افطار کے وقت جنک فوڈ یا پراسیس گوشت کا استعمال کرتے ہیں جن میں نمک کی مقدار بہت زیادہ ہوتی ہے تو وہ موٹاپے یا ذیابطیس کے خطرات بڑھانے کے ساتھ جسم میں پانی کی سطح کم کرنے والی غذا بھی ہے۔ جب آپ کا جسم نمک سے بھرا ہوا ہوتا ہے تو پیشاب زیادہ آتا ہے اور ڈی ہائیڈریشن کا امکان بڑھ جاتا ہے، تو جنک فوڈ کی بجائے تازہ اشیاءسے افطار کو ترجیح دیں۔

چائے یا کافی کا زیادہ استعمال

رمضان کے دوران ایک یا دو کپ کافی یا چائے کا استعمال تو ٹھیک ہے مگر ان مشروبات کی زیادہ مقدار زیادہ پیشاب کا باعث بنتی ہے اور جیسا بتایا جا چکا ہے کہ اس سے جسم میں موجود پانی کی زیادہ مقدار خارج ہوجاتی ہے۔ تو اگر رمضان میں چائے یا کافی کا استمعال کم کرکے لیموں پانی کا زیادہ استعمال کریں تو یہ ڈی ہائیڈریشن سے بچاﺅ کے لیے بہتر ہے بلکہ روزے کے دوران پیاس کا احساس بھی زیادہ نہیں ستائے گا۔

Source. Dawn News

Leave a Reply

Be the First to Comment!


wpDiscuz