پاکستانیوں سمیت ایشیائی ملازمین سعودیہ میں مشکلات کا شکار

3 August 2016

منیلا: تیل کی قیمتوں میں کمی کے باعث پیدا ہونے والے معاشی بحران کے باعث ہزاروں بے روزگار پاکستانی، ہندوستانی اور فلپائنی شہری سعودی عرب میں پھنسے ہوئے ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق پاکستان کا کہنا ہے کہ سعودی عرب میں کام کرنے والے اس کے 8 ہزار 520 شہریوں کو کئی ماہ سے تنخواہیں ادا نہیں کی گئیں۔

گذشتہ روز وزیراعظم نواز شریف نے سعودی عرب میں پھنسے پاکستانیوں کے معاملے کا نوٹس لے کر دفتر خارجہ کو انھیں فوری طور پر ہرممکن سہولیات فراہم کرنے کی ہدایت کی تھی۔

دوسری جانب ہندوستان کے بھی ہزاروں شہری سعودی عرب میں پھنسے ہوئے ہیں۔

رواں ہفتے پیر کو ہندوستان نے کہا تھا کہ وہ سعودی حکام سے اس حوالے سے مذاکرات کررہا ہے کہ وہ ہزاروں ہندوستانی شہریوں کی واپسی کا انتظام کرے جو اپنی ملازمتوں سے محروم ہوچکے ہیں۔

ہندوستانی وزیر خارجہ سشما سوراج نے 10 ہزار ہندوستانی شہریوں کے بیروزگار ہونے کی خبروں کے بعد نئی دہلی میں پارلیمنٹ کو بتایا تھا کہ وہ اپنے ایک جونیئر وزیر کو ریاض بھیج رہی ہیں۔

اے ایف پی کے مطابق فلپائنی شہریوں کو بیرون ملک ملازمتوں کے لیے بھیجنے والے مائیگرنٹ گروپ کے چیئرمین گیری مارٹینز کا کہنا تھا کہ کچھ فلپائنی شہری بھیک مانگنے یا بچے کچے کھانے پر گزارہ کرنے پر مجبور ہیں۔

مارٹینز نے بتایا کہ ‘ان میں سے کچھ کے پاس کھانے کو کچھ نہیں ہے اور انھیں کچرے میں سے کھانا کھانا پڑتا ہے’۔

2 سال سعودی عرب میں کام کرکے واپس منیلا آنے والے پناہ گزینوں کے کوآرڈینیٹر گلبرٹ سالودو کا کہنا تھا کہ تقریباً 20 ہزار فلپائنی حالیہ بحران کی وجہ سے متاثر ہوسکتے ہیں۔

انھوں نے مزید کہا کہ خلیجی ریاستوں میں مزدوروں کے مسائل بدترین ہوتے جارہے ہیں۔

سالودو نے اے ایف پی کو بتایا، ‘حالات مزید خراب ہوں گے کیونکہ سعودی عرب کی معیشت تیل پر انحصار کرتی ہے، لہذا انفرااسٹرکچر اور دیگر منصوبوں کے حوالے سے ان کا بجٹ پورا نہیں ہوگا اور مزید لوگ اس سے متاثر ہوں گے’۔

Source. Dawn News

Leave a Reply

Be the First to Comment!


wpDiscuz