چھٹی حس کے بارے میں سائنسدانوں کی ایسی تحقیق کہ جان کر آپ کے لئے بھی یقین کرنا مشکل ہوجائے گا

04 October 2016

نیویارک (نیوز ڈیسک) حواس خمسہ کی موجودگی کو اہل دانش اور فلسفی صدیوں سے تسلیم کرتے چلے آئے ہیں لیکن چھٹی حس کو آج تک سائنس کی دنیامیں محض ایک مذاق ہی سمجھا جاتا رہا ہے، البتہ امریکی سائنسدانوں نے اب پہلی بار چھٹی حس کی موجودگی کی سائنسی طور پر بھی تصدیق کر دی ہے۔

اخبار دی مرر کی رپورٹ کے مطابق یہ دریافت نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ کے سائنسدانوں نے کی ہے۔ انسٹی ٹیوٹ سے تعلق رکھنے والے ماہر دماغی امراض ڈاکٹر کارسٹن بان مین نے بتایا کہ دو نو عمر لڑکوں پر کی جانے والی تحقیق میں یہ بات ثابت ہوئی ہے کہ انسان میں حواس خمسہ، یعنی دیکھنے، سننے، چکھنے، سونگھنے اور چھونے کی حس کے علاوہ بھی ایک حس پائی جاتی ہے۔ یہ دونوں لڑکے ایک حیرت انگیز بیماری میں مبتلا ہیں جس کی وجہ سے وہ دیکھے بغیر اپنے ہی جسم کی موجودگی کا احساس نہیں کرپاتے۔ ڈاکٹر بان نے بتایا کہ جب ان لڑکوں کی آنکھوں پر پٹی باندھ دی گئی تو انہیں معلوم بھی نہیں تھا کہ ان کی ٹانگیں کہاں اور بازو کہاں ہیں۔ جب ان کے بازوﺅں کو ہلکی سی حرکت دی گئی تو انہیں یہ بھی معلوم نہیں تھا کہ ان کے بازوﺅں نے حرکت کی ہے اور انہیں کس جانب حرکت دی گئی ہے۔ اسی طرح جب ان لڑکوں کی آنکھوں پر پٹی باندھی گئی تو وہ چلنے کے قابل بھی نہیں تھے کیونکہ انہیں اپنی ٹانگوں کی موجودگی کا احساس ہی نہیں تھا۔

ڈاکٹر بان مین کا کہنا تھا کہ اگرچہ یہ لڑکے باقی تمام حواس رکھتے ہیں لیکن اس کے باوجود اپنے جسم کو دیکھے بغیر اپنی موجودگی کا احساس نہیں کر پاتے۔ ان کا کہنا تھا کہ عام انسانوں میں یہ مسئلہ نہیں ہوتا کیونکہ اگر ہم اپنی دیکھنے کی حس سے کام نہ بھی لیں تو قدرتی طور پر ہمیں اپنے باقی جسم کی موجودگی اور مختلف اعضاءکی حرکت اور جگہ کا احساس ضرور ہوتا ہے۔ ڈاکٹر بان مین کا کہنا ہے کہ ان لڑکوں پر کی جانے والی تحقیق سے ثابت ہوا کہ ان کے ایک جین ”پیزو2“ میں خرابی تھی جس کی وجہ سے دماغ میں مخصوص قسم کے برقی سگنل پیدا کرنے والے خلیات موجود نہیں تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس جین کو ہم ”چھٹی حس کا جین“ بھی کہہ سکتے ہیں، جس کی وجہ سے ہمیں وہ باتیں بھی معلوم ہوجاتی ہیں جو ہماری پانچ حسیں ہمیں نہیں بتا سکتیں۔ یہ تحقیق سائنسی جریدے ”نیو انگلینڈ جنرل آف میڈیسن“ میں شائع کی گئی ہے۔

Source. Daily Pakistan

Leave a Reply

1 Comment on "1-4-10-2016"


Sort by:   newest | oldest | most voted
Guest
Nadeem Arain
8 months 19 days ago

mza nai aya parh k :p

wpDiscuz